Surah Muzammil Amal


میں نے سورۃ مزمل کا باَ موکل وظیفہ کیسے کیا:
 یہ آج سے 36سال پہلے کی بات ہے،ان دنوں میری گھڑی سازی کی دکان پرایک عامل آیا کرتے تھے،انہوں نے بہت سارےعمل کیے ہوئے تھے،خاص طور پر وہ سورۃ مزمل کے با موکل عامل تھے،اس کے علاوہ ان کے پاس جنات کو جان سے مارنے کے بہت سے عجیب وغریب عمل تھے،یہاں تک کہ وہ بعض اوقات سرکش جنات کو ہمیشہ ہمیشہ کے لیے درختوں میں ٹھونک دیا کرتے تھے، ایک دن وہ دکان پر بہت خوش گوار موڈ میں بیٹھے تھے کہ میں نے انہیں اپنی دلی خواہش سے آگاہ کر تے ہوئے کہا کہ مجھے جنات کو تسخیر کرنے کا بہت شوق ہے،میرے جذبات کو دیکھتے ہوئے انہوں نے مجھے سورۃ مزمل کے با موکل وظیفے کا طریقہ سمجھاکر اجازت دےدی،انہوں نے مجھے بتایاکہ روزنہ باوضوہوکرتہجد کی نماز میں گیارہ (11)مرتبہ سورۃ مزمل پڑھنی شروع کردو، انشاءاللہ سورۃ مزمل کے تمہارے قابو میں آجا ئیں گے،انہوں نے مجھے یقین دہانی کرئی کہ فکر کعنے کی کوئی ضرورت نہیں،اس عمل کے دوران تمہیں کسی قسم کا نقصان نہ پہنچےگا،اللہ تعالٰی نے مجھے بہت زیادہ قوت ارادی سے نوزاہے،کوئی بھی کام کرناہو،میری کوشش ہوتی ہے، کہ وہ جلد مکمل ہوجائے،اس عادت کی بناپر میں نے استاد کے بتائے ہوئے تریقے پریعنی روزنہ (11) مرتبہ سورۃ مزمل پڑھنے کی بجائے روزنہ(41)

مرتبہ سورۃمزمل پڑھنے سے عمل کا آغازکردیا،
اس عمل کے دوران میںنے استاد کی نگرانی کی پروہ نہیں کی، کیوں کہ اللہ کے فضل سے میرا ارادہ بہت مضبوط ہوتا ہے،جب میں کسی کام کوکر نے فیصلہ کرلوں تو پھرنتائج کی پرواہ کیے بغیر اس کام کو مکمل کرکے ہی دم لیتا ہوں،میں نے اللہ کی ذات پر بھروسہ کرکےکسی بھی خطرےکی پرواہ کیے بغیرروزنہ (41) مرتبہ سورۃمزمل کی پڑھائی جاری رکھی،مجھے جنات کوجلد ازجلد قابو کرنے کا اتنا شوق تھا کہ مزید چنددن بعدمیں نےسورۃ مزمل کی پڑھائی(41)مرتبہ سے بڑھا کر (82)مرتبہ کردی،اس عمل کوکرنےمیں روزاںہ تقریباً دوگھنٹےصرف ہو تے تھے،دس بارہ دن کت بعد ہی میری امید بر آئی،ہواں کہ ایک رات تہجد کے وقت میں سورۃمزمل کا عمل کرن میں مصروف تھاکہ مجھ پرغنودگی کی سی کیفیت طاری ہوگی،اس حالت میں مجھے دو جنات نظرآئے،ایک سفید اوردوسراکالے کپڑوں میں ملبوس تھا،دونوں نے اپنے چہرے چھپارکھے تھے،وہ دونوں میرے سامنےآکر بیٹھ گئے،ان کے اور میرے درمیان نہ توکوئی بات چیت ہوئی،نہ انہوں نے کوئی مطالبہ کیا اور نہ ہی شرئط وغرہ طے ہوئیں،
سورۃمزمل کے موکلات کی حاضری کے اس واقے سے مجھے اندزہ ہی نہ ہواکہ میں اپنے عمل میں کامیاب ہو گیا ہوں،میرے ذہن میں ہی نہیں تھا کہ مو کلات اتنی جلدی میرے زیراثرہوجائیں گے،
میں نے سورۃ مزمل کا عمل جاری رکھا،اوراس دوران روزانہ موکلات کی حاضری بھی ہوتی رہی،لیکن میں آخری وقت تک لاعلم ہی رہا کہ میں سورۃ مزمل کا با موکل عامل بن گیاہوں،




Post a Comment

0 Comments