Jalali Aur Jamali Parhez Kya Hai

پرہیز جلالی ترکِ حیوانات کا بیان
اگر عامل جلالی آیات وعملیات کرے تو لازم ھے۔کہ وہ ہر قسم کا گوشت مچھلی انڈا شہد اور مشک کا استعمال نہ کرے۔ اونی وریشمی کپڑا چرمی ڈول کاپانی اور اور ہر اس چیز سے جو جانور سے پیدا ہوتےھے۔مکمل پرہیز کرے۔ جوں تک نہ مارے دانت اور سینگ کے دستہ والے چاقو یا چھری وغیرہ بھی استعمال نہ کرے جوتی اور موزہ تک نہ پہنے۔دوران عمل میں اپنی حجامت تک نہ کرائے۔ اور نہ ہی ناخن تراشے عورت کے نزدیک بھی نہ جائے بعض عامل مسور کی دال اور پانی کے علاوہ لہسن پیاز اور دیگر بدبودار سبزی
مسلا۔مولی وغیرہ بھی استعمال سے منع کرتے ہیں ہیں دوسرے شخص کے بستر پرنہ سوئے ہر وقت باوضو رہے۔کسی دوسرے آدمی کے ساتھ بھی نہ لگے۔اگرطاقت ہو تو روز روزہ رکھے۔کسی قسم کا میوہ نہ کھائے۔دودھ لسی وغیرہ بھی استعمال نہ کرے اور نہ کسی قسم کی مٹھائی استعمال کرے۔تل اور سرسوں کا تیل بھی منع ھے۔ البتہ اگر اپنے سامنے کسی مسلمان تیل سے نہایت صفائی اور احتیاط کے۔ساتھ تیل نکلوالے تو تیل استعمال کر سکتا ھے۔ اور تیل نکلوانے سے بیشتر تلوں یا سرسوں کو جن کا تیل نکوانا ھے۔صاف کرکے کسی پانی کے برتن میں ڈال دے۔جودانے اوپر تیرتے رہیں ان الگ کردے اور باقی دانو کا جو ڈوب جایئں تیل نکلولے۔دوران عمل میں اگر کسی کو ساتھی بنانا ہو تو وہ پرہیز متق اور صالح ہو جس نے کھبی کوئی حرام کام نہ کیاہو۔کپڑا وہ پہنے جو سیاہ نہ ہو روز غسل کرے کسی وقت جسم سے خون نہ نکلنے پائے۔کسی ایسے درخت کا پتہ نہ توڑےکسی قسم کی جاندار سواری نہ کرے۔بعض عامل بغل اور موئے زیر ناف موئے اور ناخن تراشنے کی اجازت دیتے ہیں ۔

Post a Comment

0 Comments