Buri Nazar Se Bachne Ka Tarika

بری نظر کا اثر
ابن عباس رضی اللّٰہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہےکہ اللّٰہ کے رسول صلی اللّٰہ علیہ وسلم فرماتے ہیں :کہ بری نظر کا اثرایک حقیقت ہے اگرکوئی چیز قسمت میں آڑے آسکتی ہے تووہ بری نظر کااثرہے،اورجب۔تم سے کہاجائے کہااس کےعلاج کیلئے غسل کرلوتواس بری نظر کے اثر سے بچے کیلئے تمہیں غسل کرلینا چاہئے۔
(حدیث نمبر ۵۴۲۷جلدنمبر ۳صحیح مسلم،انگریزی،بیروت )
حضرت ام سلمہ رضی اللّٰہ تعالیٰ عنہا زوجہ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم سے روایت ہے کہ اللّٰہ کےرسول صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے ایک چھوٹی لڑکی سے کہا جو کہ میرے مکان میں تھی کہ میں (صلی اللّٰہ علیہ اسلم)اس بچی کے چہرے پرکالے داغ دیکھتاہوں اورفرمایااس کی وجہ بری نظر کااثرہے اور فرمایا اس کا علاج جھاڑ پھونک کرکیا جائے جس سے اس کا چہرہ بیداغ ہو جائے ۔
(حديث نمبر ۵۴۵۵جلد نمبر ۳صحیح مسلم،انگریزی،بیروت)

Post a Comment

0 Comments